کوٹ ادو میں دھماکے سے 5 افراد جاں بحق، 3 زخمی

1 جون 2023 کو پنجاب کے کوٹ ادو میں دھماکے کی جگہ پر موجود ریسکیو 1122 کا کارکن۔ — تصویر مصنف کی طرف سے
  • جاں بحق ہونے والے تمام افراد کا تعلق ایک ہی خاندان سے ہے جن میں تین خواتین بھی شامل ہیں۔
  • ریسکیو 1122 کا کہنا ہے کہ دھماکے کی نوعیت کے بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہے۔
  • زخمیوں کو ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر (ڈی ایچ کیو) ہسپتال کوٹ ادو منتقل کر دیا گیا۔

کوٹ ادو: مظفر گڑھ سے تقریباً 80 کلومیٹر دور پنجاب کے علاقے کوٹ ادو میں دائرہ دین پناہ میں ایک گھر میں دھماکے سے کم از کم پانچ افراد ہلاک اور تین زخمی ہو گئے۔ پولیس نے جمعرات کو بتایا۔

پولیس کے مطابق جس گھر میں دھماکا ہوا وہ کباڑ خانے میں کام کرنے والے شخص کی ملکیت تھا۔

انہوں نے تصدیق کی، “دھماکے کے وقت بھی ناکارہ مواد اور اسکریپ کو چھانٹا جا رہا تھا،” انہوں نے مزید کہا کہ دھماکے کے فوراً بعد پولیس کی ٹیمیں اور متعلقہ سیکورٹی ایجنسیاں موقع پر پہنچ گئیں۔

پولیس نے کہا کہ دھماکے کی نوعیت کی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ہلاک ہونے والوں میں دو خواتین اور ایک لڑکی شامل ہے۔ ان کا تعلق بھی ایک ہی خاندان سے تھا۔

جاں بحق ہونے والوں کی شناخت 40 سالہ حسینہ مائی، 38 سالہ بلال، 30 سالہ اقبال، 28 سالہ شانو مائی اور چار سالہ سعدیہ بی بی کے نام سے ہوئی ہے۔

علاوہ ازیں زخمیوں کو ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر (ڈی ایچ کیو) ہسپتال کوٹ ادو منتقل کر دیا گیا۔

ریسکیو 1122 کے مطابق کنٹرول روم کو صبح 8 بج کر 44 منٹ پر کال موصول ہوئی جس میں فون کرنے والے نے بتایا کہ گھر میں کسی “نامعلوم چیز” کے پھٹنے سے پانچ افراد جاں بحق اور تین زخمی ہو گئے ہیں۔

فون کرنے والے نے درخواست کی کہ ایمبولینس جلدی بھیجی جائے۔

“ریسکیو 1122 کنٹرول روم نے فوری طور پر کوٹ ادو سنٹرل ریسکیو اسٹیشن سے تین ایمبولینسیں جائے حادثہ پر روانہ کیں اور پولیس کو بھی مطلع کیا،” ہیلپ لائن کے ایک بیان میں کہا گیا۔

ریسکیو عملہ جب جائے وقوعہ پر پہنچا تو عینی شاہدین نے بتایا کہ کمرے میں نامعلوم چیز کے پھٹنے سے 5 افراد موقع پر ہی جاں بحق اور 3 زخمی ہوگئے۔

جبکہ ریسکیو ٹیم نے امدادی کارروائیاں شروع کر دی ہیں، بیان میں کہا گیا ہے کہ دھماکے کی نوعیت کے بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہو گا۔

پنجاب کے انسپکٹر جنرل پولیس (آئی جی پی) عثمان انور نے دھماکے کا نوٹس لیتے ہوئے ڈیرہ غازی خان کے ریجنل پولیس آفیسر سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

انہوں نے مظفر گڑھ کے ضلعی پولیس افسر کو معاملے کی تمام پہلوؤں سے تحقیقات کرنے کی بھی ہدایت کی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں