گوجرانوالہ کی عدالت نے پرویز الٰہی کے جسمانی ریمانڈ سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔

پرویز الٰہی کو 2 جون 2023 کو محافظوں کے ذریعے انسداد بدعنوانی کی عدالت میں لے جایا جا رہا ہے، یہ اب بھی ایک ویڈیو سے لیا گیا ہے۔ – یوٹیوب/جیو نیوز
  • اے سی ای نے پرویز الٰہی کا 14 روزہ جسمانی ریمانڈ مانگ لیا۔
  • تفتیشی ٹیم نے عدالت کو بتایا کہ الٰہی کو دو مقدمات میں گرفتار کیا گیا۔
  • سابق وزیراعلیٰ پنجاب کا کہنا ہے کہ عدالت جو بھی فیصلہ کرے گی وہ ہو گا۔

گوجرانوالہ: گوجرانوالہ کی عدالت نے ہفتہ کو پنجاب اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ (ACE) کی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے صدر پرویز الٰہی کے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

پنجاب اے سی ای کے حکام نے الٰہی کو لاہور سے گرفتار کرنے کے ایک دن بعد آج جوڈیشل مجسٹریٹ محمد افضل کی عدالت میں پیش کیا۔

ACE حکام آج صبح الٰہی کو لاہور سے گوجرانوالہ میں واقع اس کے علاقائی دفتر لائے تھے۔

سماعت کے دوران اینٹی کرپشن حکام نے عدالت سے استدعا کی کہ ان کا جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔

گزشتہ روز لاہور کی مقامی عدالت نے ضلع گجرات کے لیے مختص ترقیاتی فنڈز میں 70 ملین روپے کی کرپشن سے متعلق کیس کے سلسلے میں پی ٹی آئی رہنما کو رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔

تاہم، چند منٹ بعد انہیں پنجاب اے سی ای کی جانب سے گوجرانوالہ میں ان کے خلاف درج بدعنوانی کے مقدمے میں دوبارہ گرفتار کر لیا گیا۔

اس کے بعد سابق وزیراعلیٰ کو گوجرانوالہ لے جایا گیا۔ اینٹی کرپشن ذرائع کا کہنا تھا کہ الٰہی کے خلاف گوجرانوالہ اور گجرات میں اربوں روپے کی کرپشن کے دو مقدمات درج ہیں۔

آج کی سماعت

تفتیشی ٹیم نے سماعت کے دوران عدالت کو بتایا کہ گوجرانوالہ کے اینٹی کرپشن تھانے میں الٰہی کے خلاف دو مقدمات درج ہیں۔

تحقیقاتی ٹیم نے کہا کہ پرویز الٰہی کو دو مقدمات میں گرفتار کیا گیا ہے۔

ٹیم نے مقدمات کی تفتیش اور رشوت کی رقم کی وصولی کے لیے الٰہی کا 14 روزہ جسمانی ریمانڈ طلب کیا۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب نے اپنے وکیل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں تھانے میں رکھا گیا اور انہیں دوائیاں نہیں دی گئیں۔

انہوں نے کہا کہ میں نے صبح اپنی دوائیں بڑی مشکل سے لی، انہوں نے مزید کہا کہ انہیں باتھ روم استعمال کرنے کی بھی اجازت نہیں تھی۔

سماعت کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے الٰہی نے کہا کہ عدالت جو بھی فیصلہ کرے گی وہ ہو گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ عدلیہ کے لیے ایک امتحان ہے۔

مقدمات

واضح رہے کہ سابق وزیراعلیٰ پنجاب کے خلاف ٹھیکے دینے میں کک بیکس لینے کے الزام میں گوجرانوالہ میں دو مقدمات درج ہیں جب کہ سابق وزیراعلیٰ کے خلاف لاہور میں ایک مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

اس سے قبل لاہور کی انسداد بدعنوانی کی خصوصی عدالت کے جج نے الٰہی کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے حکام کو 2 جون تک پیش کرنے کا حکم دیا تھا۔ پی ٹی آئی رہنما کے دو وارنٹ گرفتاری جاری کیے گئے ہیں۔ پہلا 25 مئی کو ضمانت منسوخی کے بعد جاری کیا گیا تھا جبکہ دوسرا 26 مئی کو جاری کیا گیا تھا۔

اپریل میں، اے سی ای گوجرانوالہ نے ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے پی ٹی آئی کے صدر کے خلاف مقدمہ درج کیا، جس میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب پر ایک ترقیاتی سکیم کے ٹھیکے کے لیے 2 ارب روپے رشوت لینے کا الزام لگایا گیا تھا۔

ایک اور کیس میں، ایک FIR نمبر 6/23 الٰہی کے خلاف ایک بین الاقوامی تنظیم – ایک ترک کمپنی سے 120 ملین روپے رشوت لینے پر درج کی گئی۔

انسداد بدعنوانی کی عدالت کے جج نے الٰہی کا میڈیکل سرٹیفکیٹ بھی بوگس قرار دیا جس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ انہیں سینے میں درد تھا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں