سپریم کورٹ نے انسانی اسمگلنگ کو روکنے کے لیے اٹھائے گئے اقدامات سے متعلق رپورٹس طلب کی ہیں – SUCH TV

سپریم کورٹ نے بدھ کے روز تمام صوبوں کو انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے کیے گئے اقدامات اور اسکول سے باہر بچوں کے ڈیٹا سے متعلق رپورٹس ایک ماہ میں جمع کرانے کی ہدایت کی ہے۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال اور جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی پر مشتمل سپریم کورٹ کے دو رکنی بینچ نے کم سن بچوں کی سمگلنگ کیس کی سماعت کی۔

سماعت کے دوران عدالت نے ریمارکس دیے کہ انسانی سمگلنگ کی روک تھام کے لیے پالیسیاں بنانے اور ان پر عمل درآمد کی ضرورت ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ یونانی ساحلوں پر کشتی کا سانحہ انسانی حقوق کا معاملہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ معصوم اور غریب لوگوں کو بہتر ملازمتوں کے بہانے بیرون ملک جانے کا جھانسہ دیا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ شہریوں کو انسانی اسمگلروں نے دھوکہ دیا اور لاکھوں روپے ادا کئے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ یہاں تک کہ بچے اور خواتین بھی انسانی سمگلنگ کا شکار ہو رہے ہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا حکومت کے پاس اسمگل ہونے والے بچوں کی تعداد کے اعدادوشمار ہیں؟

وزارت انسانی حقوق کے ڈائریکٹر جنرل نے جواب دیا کہ بدقسمتی سے درست اعداد و شمار دستیاب نہیں ہیں۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ 2018 میں انسانی اسمگلنگ کے خلاف قوانین میں ابہام تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بنیادی تشویش قوانین کے نفاذ کے لیے ماہر فورس کی عدم دستیابی تھی۔ انہوں نے کہا کہ انسانی اسمگلنگ کو روکنے کی ذمہ داری بھی پولیس کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے صوبائی حکومتوں سے بھی کہا تھا کہ وہ انسانی سمگلنگ کے خلاف اپنا کردار ادا کریں۔

چیف جسٹس نے طیبہ تشدد کیس کو بھی یاد کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ نے بھی کچھ عرصہ قبل طیبہ تشدد کیس کی سماعت کی تھی۔

انہوں نے بتایا کہ طیبہ اب نویں جماعت کی طالبہ تھی۔ طیبہ کو اس کے والدین نے چھوڑ دیا تھا اور اب وہ ایک SOS گاؤں میں رہ رہی تھی۔

چیف جسٹس نے کہا کہ اس کا مقصد صرف بچوں کی حفاظت کرنا نہیں بلکہ انہیں مضبوط کرنا بھی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ معاشرے کو تعلیم دینے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ معاشرے کے پسے ہوئے طبقوں کا تحفظ ہمارا مذہبی فریضہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کو خواتین اور بچوں سمیت انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے ایک پالیسی تشکیل دینی چاہیے۔

بعد ازاں کیس کی سماعت ایک ماہ کے لیے ملتوی کر دی گئی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں