پاکستان نے سویڈن پر زور دیا کہ وہ قرآن پاک کی بے حرمتی کرنے والے شخص کے خلاف قانونی کارروائی کرے۔

سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف پارلیمنٹ ہاؤس میں ایشیا پیسیفک گروپ کی پارلیمنٹ کے لیے SDGs پر تیسرے IPU علاقائی سیمینار کے اختتامی اجلاس کے شرکاء سے خطاب کر رہے ہیں۔ – اے پی پی/فائل
  • قرارداد وزیر پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباس نے پیش کی۔
  • ارکان اسمبلی نے متفقہ طور پر قرارداد منظور کرتے ہوئے واقعہ پر گہرے دکھ کا اظہار کیا۔
  • مشترکہ اجلاس بین الاقوامی برادری پر زور دیتا ہے کہ وہ ایسے واقعات کے خلاف موثر اقدامات کرے۔

جمعرات کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اسٹاک ہوم میں قرآن پاک کی بے حرمتی کے خلاف مذمتی قرارداد منظور کی گئی اور سویڈن کی حکومت پر زور دیا گیا کہ وہ مقدس کتاب کو نذر آتش کرنے والے شخص کے خلاف قانونی کارروائی کرے۔

عید الاضحی کے موقع پر سٹاک ہوم میں عوامی سطح پر مقدس کتاب کے نسخے کو نذر آتش کرنے کے گھناؤنے فعل نے دنیا بھر میں احتجاج اور غم و غصے کو جنم دیا۔

ایک عراقی شخص نے 28 جون کو سویڈن کے دارالحکومت میں ایک مسجد کے باہر مقدس کتاب کی ایک کاپی کو آگ لگا دی۔

قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف کی زیر صدارت پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں سویڈن میں قرآن پاک کی بے حرمتی کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر قرارداد وفاقی وزیر پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباس نے پیش کی۔

حکومتی اور اپوزیشن جماعتوں کے اراکین پارلیمنٹ نے اس واقعہ پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس شرمناک فعل سے دنیا بھر کے مسلمانوں کو شدید دکھ پہنچا ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کسی بھی مہذب معاشرے کو آزادی اظہار کی آڑ میں اشتعال انگیزی اور مذہبی جذبات کی توہین کی اجازت نہیں دینی چاہیے۔

انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ اس افسوسناک واقعے کا ازالہ کرے اور ایسے واقعات کو روکنے کے لیے موثر اقدامات کرے۔

یہ ایوان سویڈن میں قرآن پاک کی بے حرمتی کی مذمت کرتا ہے۔ سویڈش حکومت واقعے میں ملوث شخص کے خلاف قانونی کارروائی کرے۔

مزید یہ کہ قرارداد میں سویڈش حکومت پر زور دیا گیا کہ وہ اس بات کی یقین دہانی کرائے کہ مستقبل میں ایسے واقعات رونما نہیں ہوں گے۔

اس میں مطالبہ کیا گیا کہ اسلاموفوبک واقعات کو دیگر مذاہب کے خلاف واقعات کی طرح نمٹا جائے اور مقدس مذہبی رسومات کی کتابوں اور شخصیات کی بے حرمتی کو مسترد کیا جائے۔

مشترکہ اجلاس میں اسلامو فوبیا سے نمٹنے کے لیے موثر پالیسی بنانے پر بھی زور دیا گیا۔

وزیراعظم نے سویڈن سے وضاحت طلب کر لی

مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم شہباز شریف نے سویڈن کی حکومت پر زور دیا کہ وہ قرآن پاک کی بے حرمتی پر اپنی پوزیشن واضح کرے اور کہا کہ اس نے اپنی پولیس کی حفاظت میں ایسے اقدام کی اجازت اس دن کیوں دی جب مسلمان عید الاضحیٰ منا رہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ قرآن پاک کی بے حرمتی مسلمانوں اور عیسائیوں کے درمیان دشمنی پیدا کرنے کی کوشش ہے اور اس طرح کے قابل مذمت فعل کی تکرار کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی۔

وزیراعظم شہبازشریف نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس سے مسلم دنیا کے رہنماؤں کو مدعو کرنے اور مذمتی قرارداد منظور کرنے کے لیے ہنگامی اجلاس بلانے کا بھی مطالبہ کیا۔

انہوں نے قومی اسمبلی کے سپیکر پر زور دیا کہ وہ ایک مینڈیٹ کے ساتھ ایک کمیٹی تشکیل دیں جو بین الاقوامی تنظیموں سمیت دنیا بھر میں ان کی ترسیل کے لیے سفارشات مرتب کرے تاکہ اس طرح کی کارروائیوں کو روکا جا سکے۔

وزیراعظم نے ارکان پارلیمنٹ پر زور دیا کہ وہ سویڈش پولیس کے اس فعل کی مذمت کریں اور واضح کریں کہ مسلمان قرآن پاک کی حرمت کے تحفظ کے لیے اپنی جانیں بھی قربان کر سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پرامن احتجاج کو کمزوری نہ سمجھا جائے اور اگر ایسے قابل مذمت اقدامات دہرائے گئے تو اس کے نتائج کی شکایت کسی کو نہیں کرنی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں جمعہ کو یوم القدس یوم القدس منایا جائے گا، پوری قوم کو چاہیے کہ وہ قرآن پاک کی بے حرمتی کی مذمت اور اپنے جذبات کو دنیا تک پہنچانے کے لیے ملک بھر میں ریلیاں نکالیں۔

“یہ برداشت سے باہر ہے۔ یہ پہلا موقع نہیں ہے جیسا کہ اس سے قبل بھی سویڈن میں ایسا ہی ہوا تھا۔

اس کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کی جانی چاہیے،‘‘ انہوں نے کہا۔

وزیر اعظم نے نیوزی لینڈ کی سابق وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن کو مسلمانوں کے خلاف اسلام فوبک حملے کے بعد مسلمانوں کی حمایت پر سراہا، جو مسلمانوں اور عیسائیوں کے درمیان امن قائم کرنے کی ایک مثبت کوشش تھی۔


– APP سے اضافی ان پٹ کے ساتھ

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں