ضلع ملیر میں ڈائریا کے مزید 67 کیسز سامنے آگئے، تعداد 327 ہوگئی

20 ستمبر 2022 کو سندھ کے جامشورو میں مون سون کے موسم کے دوران بارشوں اور سیلاب کے بعد سیلاب کا شکار ہونے والی ایک خاتون، ہسپتال میں اپنے بیمار بچے کی دیکھ بھال کر رہی ہے۔ — رائٹرز

کراچی: کراچی کے ضلع ملیر سے جمعرات کو ڈائریا کے مزید 67 کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد کیسز کی مجموعی تعداد 327 ہوگئی۔

محکمہ صحت سندھ کے ایک اہلکار کے مطابق 28 جون سے 5 جولائی تک خواتین اور بچوں سمیت 327 افراد شدید واٹر ڈائریا (AWD) سے متاثر ہوئے۔

جبکہ جنوری سے جون تک ضلع کے مراد میمن ہسپتال میں اے ڈبلیو ڈی کا صرف ایک مریض مردہ لایا گیا جبکہ سال کے پہلے چھ ماہ میں ہیضے کے صرف تین کیسز رپورٹ ہوئے۔

محکمہ صحت کے ترجمان کے مطابق پانی کے ٹینک آلودہ اور کیچڑ سے بھرے پائے گئے اور یہ وباء وائبرو کولرا/ای کولی وائرس کی وجہ سے ہے جو کہ مین واٹر سپلائی میں پایا گیا تھا۔

ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر جمیل مغل نے ڈپٹی کمشنر ضلع ملیر کو خط لکھ کر واٹر بورڈ سے کہا ہے کہ وہ ٹینکیوں کی صفائی اور پانی میں کلورین کی دستیابی کو یقینی بنائے تاکہ پانی کسی بھی قسم کے جراثیم اور وائرس سے پاک رہے۔

ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز کراچی کی ہدایت پر وبریو ہیضے کی تیزی سے تشخیص کے لیے تشخیصی کٹس میمن گوٹھ اسپتال کے حوالے کردی گئیں۔

ڈپٹی کمشنر ملیر سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ لوکل گورنمنٹ حکام کو پانی کی فراہمی کی مناسب فلٹریشن اور کلورینیشن کو یقینی بنانے کی ہدایت کریں۔

ہیضہ اور شدید پانی والے اسہال کے واقعات پانی کے ذرائع اور سپلائی آلودہ ہونے کی وجہ سے ہوتے ہیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں