کراچی پولیس نے پی ٹی آئی رہنما علی زیدی کو گرفتار کر لیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سندھ چیپٹر کے صدر علی زیدی کو کراچی پولیس نے منگل کے روز القادر ٹرسٹ کیس میں پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان کی اسلام آباد میں گرفتاری کے بعد شہر میں ہونے والے مظاہروں کے بعد حراست میں لے لیا۔

اگرچہ پولیس نے حراست کی وجہ نہیں بتائی ہے، تاہم سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی گرفتاری کی ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ پولیس نے شہر کے کالا پل علاقے کے قریب زیدی کو سفید رنگ کی ٹویوٹا گاڑی میں زبردستی بٹھایا۔

پی ٹی آئی کی قیادت نے کارکنوں سے کہا ہے کہ وہ خان کی گرفتاری کے خلاف سڑکوں پر آئیں اور ایک “ایمرجنسی کمیٹی” – جو ان کی گرفتاری کی صورت میں تشکیل دی گئی تھی – اگلے لائحہ عمل کا اعلان کرنے کے لیے تیار ہے۔

اس کے بعد پی ٹی آئی کے کارکنوں نے اسلام آباد، راولپنڈی، لاہور، کراچی، گوجرانوالہ، فیصل آباد، ملتان، پشاور اور مردان سمیت کئی شہروں میں احتجاجی مظاہرے کئے۔

کراچی میں شاہراہ فیصل پر نرسری کے قریب مظاہرین کی پولیس سے جھڑپ ہوئی۔ انہوں نے پولیس کی گاڑیوں پر پتھراؤ کیا اور آگ لگا دی، اسٹریٹ لائٹس کو توڑ دیا اور ایک بس کو نقصان پہنچایا۔ اطلاعات ہیں کہ پولیس نے مظاہرین پر آنسو گیس کے گولے داغے۔

مظاہرین نے راولپنڈی اور لاہور سمیت دیگر شہروں میں بھی سرکاری املاک کو نقصان پہنچایا۔

ادھر شارع فیصل پر احتجاج کرنے پر پی ٹی آئی کے 23 کارکنوں کو بھی گرفتار کر لیا گیا ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں