‘میں جعفر کو اس کی حالت میں نہیں چھوڑنا’

اے آر وائی ڈیزائن کے ڈرامہ سیریل ‘ہوک’ میں حیا (کنزا ہاشمی) کہتی ہیں کہ میں جعفر (فیصل قریشی) کو اس کی حالت میں چھوڑ نہیں سکتی۔

ڈرامہ سیریل ‘ہوک’ میں شخصیت فیصل قریشی (جعفر الٰہی)، حنا دلپذیر (جعفر الٰہی کی والدہ)، صائمہ نور (جعفر الٰہی کی اہلیہ)، شہروز سبزواری (بھائی، شہیر)، کنزا ہاشمی (حیا)، زین بیگ (زیان) مریم انصاری ودیگر

ہوک کی ضرب کاری کے مقابلہ میں محسن مرزا نے انجام دیا ہے جبکہ اس کی کہانی شفتہ بھٹی اور شاہد ڈوگر نے لکھا ہے۔

ڈرامے کی جعفر الٰہی، حیا، جعفر کے گرد گھومتی کے بعد، بھائی کی حادثاتی موت الٰہی اسے قتل کر کے حیا کو گھر میں قید کرتے ہیں۔

حیا گھر سے جعفر الٰہی کی قید میں زندگی گزارنے پر مجبور۔

گزشتہ 23ویں قسط میں حصہ لیا گیا ہے کہ ‘کیا اچھا ہے کہ میں روز اپنے شوہر کے گھر سے جاتا ہوں اور آپ کے گھر جاکر جاتا ہوں’۔

وہ کہتی ہیں کہ ‘اگر میرے ماں باپ زندہ تو دربدر کی ٹھوکریں نہیں کھاتی، وہ ڈرائیور سے کہتی ہیں کہ مزید تنگ نہیں کریں گے مجھے آپ کے گھر چھوڑ دیں گے۔’

دوسری جانب سے کہا گیا ہے کہ جعفر الٰہی موٹر سائیکل سوار افراد کو پیش کرتے ہیں جس کے نتیجے میں وہ زخمی بھی ہوتے ہیں۔

جعفر الٰہی ڈرائیور کو فون کارڈ کی اطلاع دیتے ہیں، ڈرائیور صاحب کہتے ہیں کہ آپ کی گاڑی پر حملہ ہوا ہے، جلدی سے اتریں میں پاس کے پاس۔

حیا کہتی ہیں کہ ‘آپ کی کیسی زبانیں ہیں وہ میرے شوہر ہیں ان حالات میں کیسے چھوڑوں، آپ کے پاس جلدی چل رہی ہے۔’

جعفر الٰہی حملہ کس نے کیا؟ کیا جعفر الٰہی حیا سے محبت کرنے والے ہیں؟ یہ جیت کے لیے ‘ہوک’ کی 24 قسط بدھ کی رات آٹھ بجے دیکھیں۔

تبصرے

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں