انکشاف نیوز

بزنس سے وابستہ خواتین کو معیشت کا ایک اہم تعمیراتی حصہ سمجھا جاتا ہے،ثمینہ فاضل

چیئر پرسن و بانی صدر اسلام آبادویمن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریزثمینہ فاضل کا یونائیٹڈ بزنس گروپ کے اجلاس سے خطاب

اسلام آباد(کامرس رپورٹر)چیئر پرسن و بانی صدر اسلام آبادویمن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریزثمینہ فاضل نے کہا کہ یو بی جی خواتین ونگ متحد ہے اور تجارت وصنعت سے وابستہ خواتین ملک کے امیج کو بلند کرنے میں کوئی کسر نہ چھوڑنے کے لیے پرعزم ہے، بزنس سے وابستہ خواتین کو معیشت کا ایک اہم تعمیراتی حصہ سمجھا جاتا ہے کیونکہ اس نے روزگار کے مواقع پیدا کرنے، خود ترقی دینے اور ملک کی معاشی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ ان خیالات کا اظپار انہوں نے یونائیٹڈ بزنس گروپ (یو بی جی) خواتین ونگ کاپہلے اجلاس گزشتہ روز ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں پاکستان بھر سے خواتین ممبران کی بڑی تعداد نے شرکت کی جس میں سعیدہ بانو، وائس چیئرپرسن خواتین ونگ، محترمہ روبینہ امجد، چیئرپرسن پنجاب، عنبرین ہوتی، چیئرپرسن کے پی کے، مریم چوہدری، چیئرپرسن بلوچستان، رضوانہ شاہد، چیئرپرسن سندھ، ایگزیکٹوممبرز ایف پی سی سی آئی ناہید مسعود، شبنم ظفر، رخسانہ نادر، فرزانہ برنی، نعیمہ انصاری، رضوانہ آصف، قرۃ العین نے شرکت کی۔ خطبہ استقبالیہ میں ثمینہ فضل نے یو بی جی کے سرپرست اعلیٰ مرحوم ایس ایم منیر کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اس بات کا اعادہ کیا کہ خواتین ونگ کی ممبران ایس ایم منیر کے مشن کو لیکر آگے چلیں گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان ایک ترقی پذیر ملک ہونے کے ناطے جہاں خواتین کی انٹرپرینیورشپ اور معاشی سرگرمیوں میں خواتین کی شرکت کی حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید انکشاف کیا کہ پیچیدہ پالیسیاں اور مالیاتی اداروں کے طریقہ کار ان کے کاروباری مقاصد کے حصول میں ناکامی کی بڑی وجہ ہیں۔ ثمینہ فاضل نے مزید کہا کہ ایف پی سی سی آئی 2022 کے عہدیدار اب غیر قانونی ہیں اور ٹریڈ آرگنائزیشن آرڈیننس میں ترمیم کے بعد ایف پی سی سی آئی میں ان کا وجود مکمل طور پر غیر قانونی ہے۔ اجلاس میں اراکین نے انہیں اور ان کے چیمبرز کو درپیش مسائل پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا اور ان کا خیال تھا کہ خواتین کاروباریوں کو درپیش بنیادی رکاوٹوں میں اعتماد کی کمی، کم تعلیم، مارکیٹ سے آگاہی، نقل و حرکت اور مالی رکاوٹیں ہیں۔انہوں نے کہا کہ پالیسی سازوں کو خواتین تاجروں اور ان کے چیمبرز کو فروغ دینے کے لیے حکمت عملی اور حکمت عملی مرتب کرنی چاہیے۔ اراکین نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ ایف پی سی سی آئی میں خواتین کا کردار کم اور غیر اہم ہے اور ایف پی سی سی آئی کی موجودہ انتظامیہ میں کوئی پیش رفت دیکھنے میں نہیں آئی جس کی وجہ سے بہت بڑا نقصان ہوا ہے۔ ممبران نے کہا کہ ایف پی سی سی آئی میں خواتین کاروباریوں کی حوصلہ افزائی کے لیے شاید ہی کوئی سرگرمی ہوئی ہو جو ایف پی سی سی آئی میں اس امید کے ساتھ ووٹ ڈالتی ہیں کہ انہیں سپریم چیمبر کی حمایت حاصل ہے۔ خواتین ممبران نے ایف پی سی سی آئی کے آنے والے الیکشن میں بوگس ٹریڈ باڈیز کے خاتمے کے لیے ایک ٹیم کے طور پر کام کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ممبران نے وزیر تجارت اور ڈی جی ٹی او سے اپیل کی کہ وہ ایف پی سی سی آئی کے الیکشن شیڈول کا اعلان کریں اور وزارت تجارت کی براہ راست نگرانی میں ایف پی سی سی آئی میں آزادانہ، منصفانہ اور غیر جانبدارانہ انتخابات کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے ڈی جی ٹی او سے ایف پی سی سی آئی سے بوگس تجارتی اداروں کو ختم کرنے کی بھی اپیل کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں