مریم کا کہنا ہے کہ انحراف کے بعد پی ٹی آئی اب آسانی سے چنگچی میں فٹ ہو سکتی ہے۔

مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز شجاع آباد میں جلسے سے خطاب کر رہی ہیں جسے 11 جون بروز اتوار ایک ویڈیو سے لیا گیا ہے۔ — Facebook/PML-N
  • میرام کا کہنا ہے کہ افراتفری کا باب ختم ہوتے ہی ترقی کا دور شروع ہوگا۔
  • مسلم لیگ ن کے رہنما نے حکومت کی معاشی کارکردگی، تنخواہوں میں اضافے کی تعریف کی۔
  • کہتے ہیں نواز شریف کی وطن واپسی کے بعد ملکی معیشت سنبھل جائے گی۔

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کی سینئر نائب صدر مریم نواز نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ 9 مئی کے تشدد کے بعد انحراف کے بعد پوری اپوزیشن جماعت چنگچی رکشے میں بیٹھ سکتی ہے۔

انہوں نے پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ آج وہ خود پارٹی کے صدر، جنرل سیکرٹری، چیف آرگنائزر اور ترجمان اور اپنی پارٹی کے واحد امیدوار ہیں۔

حکمران جماعت کے رہنما نے ان خیالات کا اظہار اتوار کو پنجاب کے شہر شجاع آباد میں مسلم لیگ ن کے یوتھ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

ریلی میں مسلم لیگ (ن) کے رہنما کو خوبصورت موتیوں سے جکڑے سونے کے ٹائرے سے تاج پوشی بھی کی گئی۔

مریم نواز کو تاج پہنایا جا رہا ہے۔  - اسکرین گریب/جیو نیوز
مریم نواز کو تاج پہنایا جا رہا ہے۔ – اسکرین گریب/جیو نیوز

پی ٹی آئی کے برعکس، مریم نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کو ختم نہیں کیا کیونکہ “یہ عوام کی پارٹی ہے نہ کہ جعلی پارٹی”۔

انہوں نے کہا کہ 26 سال کی محنت کے بعد بننے والی پی ٹی آئی 26 منٹ میں ٹوٹ گئی۔

انہوں نے کہا کہ ملک کے اصل دشمن کی شناخت 9 مئی کے سانحے کے بعد ہوئی جس نے پی ٹی آئی سربراہ کی گرفتاری کے بعد ملک کے کئی حصوں میں عوامی اور فوجی تنصیبات پر حملے دیکھے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے مزید کہا کہ ‘افراتفری اور انارکی کا باب ختم ہوگیا اور اب ترقی کا سفر شروع ہوگا۔

شیریں مزاری، فواد چوہدری، عامر محمود کیانی، علی زیدی اور دیگر شیو سمیت درجنوں پی ٹی آئی رہنماؤں نے 9 مئی کے سانحے پر پارٹی چھوڑ دی تھی جب کہ اسد عمر اور پرویز خٹک سمیت سینئر رہنماؤں نے اسی وجہ سے پارٹی عہدوں سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

کئی پی ٹی آئی چھوڑنے والوں نے شوگر بیرن جہانگیر ترین کی طرف سے شروع کی گئی استحکم پاکستان پارٹی (آئی پی پی) میں شمولیت اختیار کی ہے جس کا مقصد “ملکی سیاست میں نئی ​​سمت متعین کرنا” ہے۔

‘بہترین بجٹ’

مریم نے وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر خزانہ اسحاق کو بھی سراہتے ہوئے کہا کہ انہوں نے مشکل معاشی صورتحال کے باوجود “بہترین بجٹ” پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم اور وزیر خزانہ نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے بیل آؤٹ پیکج کے بغیر ملک کو ڈیفالٹ سے بچایا۔

انہوں نے کہا کہ مشکل معاشی حالات میں بھی گریڈ 16 تک کے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 30 فیصد اضافہ کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ جب پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سپریمو نواز شریف طبی بنیادوں پر نومبر 2019 سے لندن میں مقیم ہیں، ملک واپس آئیں گے تو ملکی معیشت سنبھل جائے گی۔

وزیر خزانہ ڈار نے جمعہ کو مالی سال 2023-24 کے لیے 14.46 ٹریلین روپے کا بجٹ کھولا، جس میں “کوئی نیا ٹیکس نہیں” متعارف کرایا گیا اور 3.5 فیصد کی اقتصادی ترقی کا تصور کیا گیا کیونکہ بحران سے دوچار ملک آئی ایم ایف کو مزید بیل آؤٹ رقم جاری کرنے پر راضی کرنا چاہتا ہے۔ .

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں