”انوکھی” کی شیلا رامانی کا تذکرہ –

وہ لوگ جو عزیز کی پاؤاس سے زیادہ عمریں دیکھتے ہیں، اور سنیما کے شوقین ہیں تو اُ نظروں نے شیلا کی فلم ضرور دیکھی ہے، جس کا یہ گیت آج بھی بہت شوق سے سنا جاتا ہے۔ چلانا بابو ذرا ہلکے ہلکے، پھر دل کا جام نہ چھلکے…”

ماضی میں کی فلم انڈسٹری اور ان کا فن بیان کرنے میں پاکستان میں کئی بیانات بھی تھے جن کا تعلق بھارت یا دوسرے ممالک سے تھا۔ آپ نے ہر قسم کے کردار ادا کرنے اور پاکستانی فلموں میں ٹائٹل رول بھی نبھا اس ضمن میں پاکستانی فلم ”انوکھی” کی بات کریں تو اس کے کارنامے نوازے گئے۔ فلم کی ہیرو کا نام ”شیلاانی” تھا جو تقسیم ہند سے قبل صوبہ سندھ کے ایک شہر میں پیدا ہوئی، اور اس کے بعد بھارت رام کرگ جہاں نے ممبئی کی فلم نگری میں خوب کام کیا۔

فلم میں شیلا رامانی کے مدمقابل اداکار شاد۔ فلم ”انوکھی” کے لیے شیلا رامانی کو خصوصی طور پر بمبئی سے بلوایا گیا۔ یہ فلم 156 میں نمائش کے لیے پیش کی گئی جس کے لیے رامانی نے اپنے کردار کو اچھی طرح سے نبھایا کی پرفارمنس یادگار رہی، جب کہ ان پر فلمایا گیا گیتگاڑی کو چلانا بابو ذرا ہلکے ہلکے سے دل کا جام نہیں چھلک….” بے حد مقبول۔ یہ گیت سرحد پار بھی مقبول ہے تاہم فلم باکس آفس پر ناکام ثابت ہوا۔

اپنے وقت کی مشہور شخصیت نے 2015ء میں آج ہی کے دن وفات پائی۔ وہ 2 مارچ 1932ء کو پیدا ہوئی۔ چٹن آنند نے شیلا رامانی کو بالی ویڈیو میں متعدی کرایا تھا اور 1954ء میں جب کام کی فلم ٹیکسی ڈرائیور شو کے لیے پیش کیا گیا تو شائقین نے ان کی اداکاری کو بہت پسند کیا۔ شیلا رامانی کی ایک سندھی فلم ابانا بھی کیرئیر میں شان دار ثابت ہو گئی۔

اس سے زیادہ تر فلموں میں امیر گھرانے کی لڑکی کا کردار نبھایا۔ شیلا رامانی شادی کے بعد امریکہ منتقل تبدیلی تاہم ان کی زندگی کی آخری ایّام مدھیہ پردیش میں گزرتی ہے۔

آپ نے بمبئی انڈسٹری کے لیے ٹیکسی ڈرائیور، سرنگ، ریلوے پلیٹ فارم، مینار، جنگل کنگ، آوارہ لڑکی اور دیگر فلموں میں کام کرنے کے لیے شائقین سے اپنی شان دار اداکاری پر خوب داد سمیٹی۔

تبصرے

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں