سوات میں اسکول وین پر پولیس اہلکار کی فائرنگ سے ایک جاں بحق، پانچ زخمی – ایسا ٹی وی

منگل (آج) کو ایک نجی اسکول کے باہر پولیس افسر کی فائرنگ سے ایک 8 سالہ طالبہ ہلاک ہو گئی جب کہ پانچ دیگر طالب علموں کو گولیاں لگیں۔

مالاکنڈ رینج کے ڈپٹی انسپکٹر جنرل (ڈی آئی جی) کے مطابق فائرنگ کا آغاز ایک پولیس افسر نے کیا جو واقعے کے وقت ڈیوٹی پر تھا۔

اہلکار جس کی شناخت عالم خان کے نام سے ہوئی ہے کو مزید تفتیش کے لیے تحویل میں لے لیا گیا ہے۔ یہ واقعہ اسکول کے اوقات کے بعد اس وقت پیش آیا جب طلباء اپنی گاڑیوں میں روانگی کے لیے تیار ہو رہے تھے۔

گولیوں کی اچانک آواز نے پورے اسکول کے احاطے میں صدمے کی لہر دوڑادی، جس سے طلباء، اساتذہ اور عملے میں خوف و ہراس پھیل گیا۔

مقتولین تمام لڑکیاں تھیں۔

جاں بحق ہونے والوں کی شناخت روما کے نام سے ہوئی اور زخمیوں کی شناخت ابھی ظاہر نہیں کی گئی جنہیں طبی امداد کے لیے سیدو شریف اسپتال منتقل کر دیا گیا۔

مقامی حکام کو فوری طور پر اطلاع دی گئی، اور پولیس کی بھاری نفری جائے وقوعہ پر تعینات کر دی گئی۔

ہسپتال انتظامیہ کے مطابق زخمیوں میں سے دو کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔

ایک زخمی نے واقعہ سناتے ہوئے بتایا کہ تمام گاڑیاں روانہ ہونے کے بعد ہم گیٹ کے قریب جمع تھے جب گولیوں کی آواز نے ہمیں چونکا دیا۔

شوٹنگ کے پیچھے محرکات ابھی تک واضح نہیں ہیں، اور حکام ان حالات کا پتہ لگانے کے لیے مکمل تحقیقات کر رہے ہیں جن کی وجہ سے یہ افسوسناک واقعہ پیش آیا۔

سوات کے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (ڈی پی او) شفیع اللہ گنڈا پور نے واقعے پر گہرے دکھ اور صدمے کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ “یہ دل دہلا دینے والا واقعہ ہے”۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں