پی ٹی آئی کے صدر الٰہی منی لانڈرنگ کیس میں گرفتار

پی ٹی آئی کے صدر پرویز الٰہی انسداد بدعنوانی کی عدالت میں پیش ہوئے۔ — Twitter/ @MurtazaViews/File
  • یہ گرفتاری انسداد بدعنوانی کی عدالت کی جانب سے الٰہی کی ضمانت منظور کرنے کے بعد ہوئی ہے۔
  • پی ٹی آئی صدر اور بیٹے مونس کے خلاف منی لانڈرنگ کا مقدمہ درج
  • الٰہی کو عدالت میں پیش کرنے کے لیے طبی لحاظ سے فٹ قرار دیا گیا۔

لاہور: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے صدر چوہدری پرویز الٰہی کو بدھ کو وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے منی لانڈرنگ کیس میں ایک اور کیس میں ضمانت ملنے کے بعد گرفتار کر لیا۔

منگل کو انسداد بدعنوانی کی ایک عدالت نے حکام کو حکم دیا کہ الٰہی کو رہا کیا جائے، جو پنجاب اسمبلی میں غیر قانونی بھرتیوں سے متعلق کیس میں تقریباً تین ہفتوں سے قید تھے۔ ضمانت 10 لاکھ روپے کی ضمانت کے خلاف۔

تاہم پی ٹی آئی کے صدر اور ان کے بیٹے مونس الٰہی کے خلاف منی لانڈرنگ کے الزام میں رہائی کے احکامات کے چند گھنٹوں میں ہی نیا مقدمہ درج کر لیا گیا۔

چونکہ الہی نے جان بوجھ کر آج صبح ایک ہائی کورٹ سے نئے کیس میں حفاظتی ضمانت کی امید میں ضمانتی مچلکے جمع کرانے سے گریز کیا، وہ کیمپ جیل میں ہی رہے اور آخر کار اسے ایف آئی اے حکام نے حراستی مرکز سے گرفتار کر لیا۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب کو ایف آئی اے حکام نے اپنی تحویل میں لے لیا، جنہوں نے لاہور کے سروسز جنرل ہسپتال سے ان کا طبی معائنہ کرایا۔

اس کے بعد انہوں نے الہی کو طبی معائنے کے بعد سرکاری طور پر گرفتار کرنے کے بعد جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا جس نے انہیں طبی طور پر فٹ قرار دیا۔

ایف آئی اے کی جانب سے پی ٹی آئی صدر کا 14 روزہ جسمانی ریمانڈ طلب کیے جانے کا امکان ہے۔

ذرائع نے منی لانڈرنگ کیس کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا تھا کہ الٰہی اور ان کے بیٹے مونس الٰہی نے مبینہ طور پر پاناما کی پانچ کمپنیوں میں اربوں روپے کے فنڈز لگائے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ دونوں نے “منی لانڈرنگ” کے ذریعے پاناما کمپنیاں خریدیں۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ مونس الٰہی کو وطن واپس لانے کے لیے ایف آئی اے نے ان کے خلاف ریڈ وارنٹ جاری کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

الٰہی کی گرفتاری کی کہانی

واضح رہے کہ الٰہی کو ابتدائی طور پر یکم جون کو ان کی رہائش گاہ کے باہر سے ضلع گجرات کے لیے مختص ترقیاتی فنڈز میں غبن سے متعلق 70 ملین روپے کے کرپشن کیس میں گرفتار کیا گیا تھا۔

2 جون کو لاہور کی ایک ضلعی عدالت کی جانب سے ان کی رہائی کے حکم کے بعد، پی ٹی آئی کے صدر کو پنجاب اے سی ای کی جانب سے گوجرانوالہ میں ان کے خلاف درج بدعنوانی کے مقدمے میں دوبارہ گرفتار کر لیا گیا۔

اس کے بعد اسے اگلے روز گوجرانوالہ کی ایک عدالت میں پیش کیا گیا، جس نے بعد میں گجرات میں سڑکوں کی تعمیر کے لیے مختص کیے گئے ترقیاتی فنڈز میں مبینہ طور پر کک بیک لینے کے الزام میں ضلع کے اینٹی کرپشن تھانے میں درج بدعنوانی کے دو مقدمات میں انہیں بری کر دیا۔

تاہم، چند منٹ بعد انہیں اینٹی کرپشن اہلکاروں نے دوبارہ گرفتار کر لیا، جب وہ سپیکر تھے تو پنجاب اسمبلی میں مبینہ طور پر غیر قانونی بھرتیوں کے الزام میں ان کے خلاف درج مقدمہ میں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں