مزید پڑھیں

سپریم کورٹ میں سویلین ٹرائل عدالت میں درخواستوں پر آج سوال پوچھنے پر عمر عطا بندیال کی سربراہی میں 7 رکنی بینچ کیس کی سماعت کرے.

اے آر وائی نیوز کے مطابق فوجی عدالتوں میں سویلین ٹرائل عدالت میں عدالت میں درخواست پر سماعت پھر شروع ہو گی، پوزیشن عمر عطا بندیال کی سربراہی میں 7 رکن لارجر بینچ کیس کی سماعت کرے گا۔ گزشتہ روز ناکام ہونے والی عدالت میں مقدمہ درج کرنے کے لیے عدالت سے عدالتوں میں سویلین ٹرائل پر امتناع جاری کرنے کے لیے استدعا کو مسترد کر دیا گیا۔

اس سے قبل ماہر لاری کیس کے لیے 9 رکن پارلیمنٹ لارجر بینچ تشکیل دے دیا گیا تھا تاہم گزشتہ روز شروع شروع ہی میں 2 عدالت قاضی فائز عیسیٰ اور مولانا طارق مسعود بینچ سے بہت خطرناک تھے، فائدہ عیسیٰ کا کہنا تھا کہ وہ اس بینچ کے خلاف ہیں۔ بینچ تصور نہیں کرتے۔

آج کی امید میں سول سوسائٹی کے وکیل فیصل صدیقی دل کو درخواست دیں گے، درخواست گزاروں کو دلائل مکمل کرنے کے بعد ااٹارنی جنرل اعوان بھی دلائل دیں گے، عدالت نے 9 مئی کے منصور کے بعد اب تک زیر نگرانی افراد کو بھی طلب کر لیا ہے۔ کیوں

واضح رہے کہ عدالت نے وزیر اعظم شہباز شریف کو نوٹس جاری کر دیا ہے جبکہ وزیر دفاع خواجہ آصف اور وزیر رانا ثنا اللہ کو نوٹس جاری کر رہے ہیں۔ اس کے دفاع کے علاوہ، قانون کے انتظامات تمام وزارتوں کے تحفظات اور آئی جیز کو نوٹسز کا اجرا کیا گیا۔

عدالت کے اٹارنی جنرل اور چیئرمین پی ٹی آئی آئی آئی کو بھی نوٹس جاری کر رہے ہیں، منظر منیب اختر، منظریٰ آفریدی، منظر مظاہر نقوی اور بین ملک اس کے 7 رکنی رکن کا حصہ ہیں جبکہ عدالت میں جواد ایس خواجہ، اعتزاز احسن کرامت علی اور چیئرمین پی ٹی آئی نے درخواست دائر کر دی۔

درخواست گزاروں نے عدالتوں میں سویلینز کے ٹرائل کو غیر آئینی قرار دینے کی استدعا کی ہے، وزارت دفاع کے نمائندگی کرنے والے عدالت میں پہنچ گئے۔

تبصرے

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں