‘وزیراعظم اسحاق ڈار فوری مستعفی ہوں’

پاکستان تحریک انصاف کے سینیئر وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیر اعظم اسحاق ڈار کو فوری طور پر مستعفی ہونا چاہیے۔

اے آر وائی نیوز کے پی ٹی آئی کے سینئر وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایم ایف کو وزیر اعظم اسحاق ڈار پر اعتماد نہیں اور انہوں نے ڈار کے پاور کو مسترد کر دیا۔ ۔ وزیر خارجہ فوری طور پر مستعفی ہونا

شاہ محمود قریشی نے انکشاف کیا کہ بجلی کی فراہمی میں تبدیلی ہو گی اور 215 ارب مزید ٹیکس وصول کریں گے، جس کی بجلی پر ووٹنگ آپ اس میں 215 ارب نئے ٹیکس ادا کر رہا ہوں۔ بجلی کو قوم اور تاجر نے مسترد کر دیا، 5 فیصد ایکسائز ڈیوٹی پاور زرعی سیکٹر کا گلا گھونٹ دیا گیا۔ توانائی کی صورتحال سے دوچار۔ دیہاتوں میں بارہ بارہ گھنٹے کی شیڈنگ ہو رہی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ بلاول بھٹو نے سوات میں اسحاق ڈار پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پھر بھی اسمبلی میں ڈار نے کہا کہ میرے مطالبات کا فیصلہ ہو گا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ صدر بائیڈن اور بھارت سے ملاقات میں مشتبہ اعلامیہ پر افسوس ہوا، انہوں نے پاکستان کی گردی کے خلاف کاوشوں کا اعتراف ہی نہیں کیا۔ مجھے حیرت ہوئی کہ ہمیں اس پر کوئی بات نہیں ہوئی، دفتر خارجہ نے حکومت کی طرف سے بات کرنی چاہی تو ہم نے فرانس کو جواب دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کو غافل نہیں کہا جا سکتا کہ پاکستان کو لائن پر کنٹرول کرنے کا مشورہ دیا جائے۔

شاہ نے کہا کہ ملک میں آئین تو 12 اگست کو اسمبلیوں کی مدت پوری ہو گئی ہے اور اس کے اگلے 6 دن میں محمود حاضر ہونے والے ہیں، اگر قبل ازیں اگست سے اسمبلی حل کرتے ہیں تو پھر 90 دن میں حاضر ہونا ہے۔ ن لیگ اور نواز پارٹی دونوں آئینی داعی ہیں تو یہ کہتے ہیں جوڈیشر خود مختار ہے ان کا احترام ہم پر لازم ہے، آزاد کے فورم سے عدلیہ پر نظر ڈالے گا۔ اراکین پارلیمنٹ سے گزارش کریں گے کہ عدلیہ کا احترام کریں۔

ایک سوال کے جواب میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں ایک سیاست کر رہا ہوں، انصاف کا جھنڈا 2011 سے میرے ہاتھ میں۔ پسندوں اور ٹکٹوں کی سیاست سے بالا ہو گیا ہوں، پارٹی سے لینے کے لیے افواہوں پر نہیں جا سکتا۔

تبصرے

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں